ایسی تحاریر جن میں تخلیقیت اور سادگی کے ساتھ سجمھ کا عنصر حاوی ھو۔

Archive for جولائی, 2011

عرش بریں کے رشتے

ابھی جو میں لکھنے جارھی ھوں یہ میرے لئے بھی اتنی ھی عجیب بات تھی جتنی آپ لوگوں کے لئے ھوگی،پچھلے کچھ مھینوں  سے میںھیر وارث شاہپڑھ رھی ھو وھی کتاب جس کتاب میں وارث شاہ نے ھیر اور رانجھے کے قصے کو شعروں کی شکل میں ڈھالا ھے۔ قصہ چلتے چلتے اس مقام پر پھنچتا ھے جھاں ھیر کے ماں باپ ھیر کی مرضی کے خلاف اس کی شادی کھیڑوں کے ھاں کررھے ھیں مگر ھیر اس بات پر بضد ھے کہ وہ رانجھے کی منگیتر ھے اور نکاح نھیں کررھی قاضی صاحب ھیر کا نکاح پڑھانے کی کوشش کررھے ھیں مگر ھیر انکار کررھی ھے قاضی اسے سمجھا رھا ھے مگر ھیر اسےجواب دیتی ھے:"قلوب المومنین  عرش الله تعالٰی قاضی عرش خُدایئے داڈھا ناھیں
جیتھے رانجھے دے عشق مقام کیتا اوتھے کھیڑیاں دی کوئی واہ ناھیں
ایہ چڑھی گولیر میں عشق والی جیتھے ھور کوئی چاڑھ لاہ ناھیں
جس جیونے کاج ایمان ویچاں ایھاں کون جو انت فناہ ناھیں "

ترجمہ:
مومنوں کے دل الله کے عرش ھوتے ھیں ،اے قاضی خدا کے عرش کو ڈھانے کی کوشش مت کرو۔جس دل میں رانجھے کے عشق نے گھر بنا لیا ھےاس میں کھیڑوں کے لیے کوئی جگہ نھیں ھے۔میں عشق کے بُرج پر چڑھ چکی ھوں اور یہ وہ جگہ ھے جھاں پر چڑھادیا جاتا ھے لیکن یھاں سے اُترنا ممکن نھیں ھے۔ جس جیون کے لیے میں ایمان بیچوں وہ بھی تو ختم ھوجائے گا ،یھاں کون ھے جس کو فناہ نھیں ھے۔
"قالو بلا دے دن  نکاح  بدھا رُوح   نبی دی  آپ  پڑھایائے
قطب ھو وکیل وچ آ بیٹھا حکم   رب   نے   آن    کرایائے
جبرایئل  میکایئل گواہ چارے عزرایئل اسرافیل بھی آیائے
اگلا توڑ کے ھور نکاح پڑھنا آکھ رب نے کدُوں فرمایائے"
ترجمہ:
ھم دونوں( ھیر اور رانجھاکا نکاح روز الست سے ھی باندھ دیا گیا تھا اور نبی پاک کی روح نے یہ نکاح خود پڑھایا تھا۔قطب اس میں وکیل بن کر بیٹھا تھا اور یہ حکم خداوندی سے ھوا تھا،چار گواہ کے طور پر وھاں جبرایئل ،میکایئل،عزرایئل اوراسرافیل فرشتے موجود تھے۔(اے قاضی) یہ بتا تو سھی کہ پھلا نکاح توڑ کر دوسرا نکاح پڑھانے کا حکم خدا نے کب دیا ھے۔

"جیھڑے عشق دی آگ وے تاؤتتے تنھاں دوزخاں ناال کیھہ واسطہ ای
جنھاں اک دے   ناؤں  تے صدق بدھا   اُنھاں فکر اندیشڑا    کاسدا   ای
آخر صدق   یقین تے کم  پوسی   موت   چرغ   ایھہ   پتلا   ماس دا   ای
دوزخاں موریاں ملن بے صدق جھوٹھے جنھاں بان تکن آس پاس دی اے”

                                                                                                                                                        ترجمہ:
جو لوگ عشق کی آگ میں تپ رھے ھوں ان کا دوزخوں سے کیا واسطہ ھے۔جنھوں نے ایک کے نام کو صدق دل سے اختیار کیا ان کو کسی بات کی فکر نھیں ھے ۔آخر کار بات صدق یقین پر ھی ختم ھوگی کیونکہ گوشت کا یہ پُتلا تو موت کے شاھیں کا شکار ھوجائے گا ۔دوزخ میں سب سے پھلے وھی لوگ جایئں گے جو بے صدق اور جھوٹے ھوں گے اور جن کو دوسروں پر آسرا ھوگا۔             

 

(ھیر وارث شاہ)


ان اشعار میں وارث شاہ نے یہ عجیب منظر عشق کا بیان کیا ھے جس کے مطابق جو لوگ عشق کرتے ھیں ان کا نکاح پھلےسے ھی عرش پر ھوا ھوتا ھے ،آپ لوگ سمجھیں گے کہ یہ میں کتنی فرضی اور رومانوی بات کررھی ھوں مگر یہ میں نھیںیہ تو "وارث شاہجنھیں پنجابی زبان کا شیکسپیئر اور ایک عظیم ترین صوفی بزرگ سمجھا جاتا ھےوہ کھہ رھے ھیں،وارث شاہ نے ان اشعار میں محبت اور عشق کا ایک ایسا روپ پیش کیا ھے جس میں یہ تصور دیا گیا ھے کہ جو دو انسان عشق کرتے ھیں ان کا رشتہ خدا نے عرش پر ھی جوڑا ھوتا ھے ان کا نکاح پھلے سے پڑھا جاچکا ھوتا ھے اب اگر کوئی اس نکاح کو نہ مانے اور ان لوگوں کا نکاح کھیں اور کروا دے تو یہ ایسے ھی ھے کہ پھلا نکاح توڑ کر دوسرا پڑھایا جائے ،یہ بھت ھی منفرد بات ھے آج کل کے دور میں ممکن نھیں ھے کہ لوگ ایسی بات کو سمجھے مگر چونکہ عشق کا تعلق وقت اور دور سےآزاد ھے اس لیے ایک سچا عاشق ھی اس حقیقت کو جان سکتا ھے کہ جس سے اس کو عشق ھے اسکا نکاح اس سے پڑھاجاچکا ھوتا ھے۔
 
قرآن کریم میں بھی اس بات کا زکر ھے کہ الله تعالیٰ نے تمام جانداروں کو جوڑوں میں پیدا کیا ھے۔
ادب میں بھی اس طرح کی باتیں بھری پڑی ھیں
قاضی عبدالغفار اپنی کتابلیلیٰ کے خطوطمیں لیلیٰ کو قلم سے لکھتے ھیں کہ
 "کہ ھر عورت کا ایک مرد ھوتا ھے اس دنیا میں جب اس کا مرد اسے مل جاتا ھے تب وہ جانتی ھے کہ جنت دنیا کا دوسرانام ھے اس دھوکے میں مت آؤ کہ ھر مرد ھر عورت کا مرد ھوسکتا ھے ۔ابھی تک یہ فطرت کا ایک راز ھے میں تو اکثر سوچا کرتی ھوں کہ قسام ازل خود جوڑے لگا لگا کر دنیا میں بھیجتا ھے ۔پھر دنیا والے اپنی حماقت سے اس تقسیم کو غلط کردیتےھیں  اور ساری دنیا کو ماتم خانہ بنا کر احمقوں کی طرح اپنی قسمت کا گلہ کرتے ھیں !“
ان سطروں میں بھی یھی واضح کیا گیا ھے کہ جوڑے خود ازل میں تخلیق کیے گیے ھیں یہ بات میں اپنے دوستوں کو سمجھانےکی بھت کوشش کرتی ھوں مگر ھمیشہ ناکام ھی ھوتی ھوں کیونکہ آج کل کا انسان ایسی باتوں کو پسند نھیں کرتا مگر میں بس اس بات کو  یھاں ختم کرتی ھوں کہ
عشق کرنے والے ھی سمجھ سکتے ھیں کہ منکوحہ محبت کیا ھوتی ھے یہ ایک ایسی محبت ھوتی ھے جس میں نکاح پھلے سےھی  یعنی ازل سے   ھوا ھوتا ھے!
سوال تو یہ ھے کہ دنیا میں سماج والے اس نکاح کو توڑ کر دوسرا نکاح کیوں کرواتے ھیں. ھیر کا پوچھا گیا سوال آج بھی صدیوں بعد بھی ویسے ھی سامنے کھڑا ھے کیا ازل سے جُڑا رشتہ دنیا میں توڑنا جایز ھے؟ 
مصنف :فریحہ فاروق

ٹیگ بادل